0

بیماریاں ٹھیک کیوں نہیں ہوتی؟

بیماریاں ٹھیک کیوں نہیں ہوتی؟

یہ سوال ھم میں سے اکثر اذھان میں پیدا ھوتا ھے جب ھم اپنی بیماریوں کا علاج مختلف جگہوں سے کروا کروا کر تھک جاتے ھیں، لیکن درد بڑھتا ھی گیا جُوں جُوں دوا کی کے مصداق بنـتے رھے،
ناچیز اس سوال پر ایک عرصے سے غور کر رھا تھا، اس سلسلے میں آخری زمانے کے روحانی و جسمانی طبـیب و مسیحا سیدنا حضرت اقدس مسیح موعود علیہ السلام کے ارشادات سے فیض حاصل کرکے کچھ تحریر کیا ھے جو دوستوں سے شیئر کر رھا ھوں،
امراض چاھے روحانی ھوں یا جسمانی انکے علاج اور ان سے شفاء کیلئے ھم محتاج ھیں مسیح پاک علیہ السلام کے، جنھیں اللہ نے آخری زمانے میں مسیحا بناکر بھیجا،
سردار رشید قیصرانی صاحب نے کیا خوب کہا ھے کہ
تمہاری نبضیں ھمارے دم سے جواز ڈھونڈیں گی زندگی کا
کہ لکھـنـے والے نے لکھ دیا ھے مریض تم ھو طبـیب ھم ھیں

امراض ٹھیک کیوں نہیں ھوتے ؟

اس کی بنیادی وجوھات میں سے سب سے بڑی وجہ یہ ھے کہ ھمارے مرض کی صحیح طرح تشخیص و تفتیش نہیں ھوتی، اور اگر ٹھیک تشخیص ھوجاۓ تو بسا اوقات طبـیب کو اس مرض کے مطابق دوائی نہیں ملتی اور اگر دوائی اور علاج کی صورت نکل ھی آۓ تو ھم ڈاکٹر یا طبـیب کی ھدایات پر پوری طرح عمل نہیں کرتے، نہ ھی ھم پرھیز کرتے ھیں، یعنی ایسی چیز یا ایسے عمل سے اجتناب نہیں کرتے جو ھمارے لیئے نقصان دہ ھے، اور نہ ھی ھم پوری پابندی سے دوائی استعمال کرتے ھیں،
اور اگر مندرجہ بالا باتوں کے باوجود ھم مرض سے چھٹکارا نہیں پاتے تو پھر اللہ تعالی سے ھی علاج کروانا چاھیئے، اور عرض کریں کہ یااللہ تو ھی میرا اصل طبـیب ھے کیونکہ تو نے ھی مجھے پیدا کیا ھے، تو بہتر جانتا ھے کہ مجھ میں کیا نقص اور خرابی ھے، مجھ پر رحم فرما اور مجھے ٹھیک کردے، آمین،

ﻃﺎﻋﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﮨﯿﻀﮧ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻭﺑﺎﺅﮞ ﮐﺎ ﺫﮐﺮ پر حضرت مسیح موعود علیہ السلام نے ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ:

’’ ﺑﺪﻗﺴﻤﺖ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﮧ ﺍﻥ ﺑﻼﺅﮞ ﺳﮯ ﺑﭽﻨﮯ ﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﺳﺎﺋﻨﺲ ، ﻃﺒﻌﯽ ﯾﺎ ﮈﺍﮐﭩﺮﻭﮞ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺗﻮﺟﮧ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﺗﻼﺵ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺵ ﻗﺴﻤﺖ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺟﻮ ﺧﺪﺍ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﯽ ﭘﻨﺎﮦ ﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﻥ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺑﺠﺰ ﺧﺪﺍ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﮯ ﺍﻥ ﺍٓﻓﺎﺕ ﺳﮯ ﭘﻨﺎﮦ ﺩﮮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮ ؟ ﺍﺻﻞ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺟﻮ ﻓﻠﺴﻔﯽ ﻃﺒﻊ یا ﺳﺎﺋﻨﺲ ﮐﮯ ﺩﻟﺪﺍﺩﮦ ﮨﯿﮟ ﺍﯾﺴﯽ ﻣﺸﮑﻼﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﯾﮏ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﺗﺴﻠﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻃﻤﯿﻨﺎﻥ ﭘﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﺑﻌﺾ ﺩﻻﺋﻞ ﺗﻼﺵ ﮐﺮ ﻟﯿﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺳﮯ ﺍﻥ ﻭﺑﺎﺅﮞ ﮐﮯ ﺍﺻﻞ ﺑﻮﺍﻋﺚ ﺍﻭﺭ ﺍﻏﺮﺍﺽ
ﺳﮯ ﻣﺤﺮﻭﻡ ﺭﮦ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﺍﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﻏﺎﻓﻞ ﮨﯽ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺟﻤﺎﻋﺖ ﮐﮯ
ﮈﺍﮐﭩﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﻌﺎﻣﻼﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﯽ ﻋﻠﻢ ﮐﻮ ﮐﺎﻓﯽ ﻧﮧ ﺳﻤﺠﮭﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺧﺪﺍ کا ﺧﺎﻧﮧ ﺑﮭﯽ ﺧﺎﻟﯽ ﺭﮐﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻗﻄﻌﯽ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﺭﺍﺋﮯ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﻧﮧ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﮐﺜﺮ اﯾﺴﺎ ﺗﺠﺮﺑﮧ ﻣﯿﮟ ﺍٓﯾﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﻌﺾ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﺮﯾﺾ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﮯ ﺣﻖ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﮐﭩﺮﻭﮞ ﻧﮯ ﻣﺘﻔﻘﮧ ﻃﻮﺭ ﺳﮯ ﻗﻄﻌﯽ ﺍﻭﺭ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﺣﮑﻢ ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﺧﺪﺍ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﮯ ﺍﺳﺒﺎﺏ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﭻ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻭﺭ ﺑﻌﺾ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻧﺴﺒﺖ ﺟﻮ ﮐﮧ ﺍﭼﮭﮯ ﺑﮭﻠﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﮈﺍﮐﭩﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺍٓﺛﺎﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﻧﻈﺮ ﺍٓﺗﮯ ﺧﺪﺍ ﻗﺒﻞ ﺍﺯ ﻭﻗﺖ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﻮﺕ ﮐﯽ ﻧﺴﺒﺖ ﮐﺴﯽ ﻣﻮﻣﻦ ﮐﻮ ﺍﻃﻼﻉ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺏ ﺍﮔﺮﭼﮧ ﮈﺍﮐﭩﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺧﺎﺗﻤﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺧﺎﺗﻤﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﯽ ﻇﮩﻮﺭ میں ﺍٓ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﻋﻠﻢ ﻃﺐ ﯾﻮﻧﺎﻧﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﺍٓﯾﺎ ﻣﮕﺮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﭼﻮﻧﮑﮧ ﻣﻮَﺣَّﺪ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﺍ ﭘﺮﺳﺖ ﻗﻮﻡ ﺗﮭﯽ،
ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺳﯽ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﺴﺨﻮﮞ ﭘﺮ ﮬﻮﺍﻟﺸﺎﻓﯽ ﻟﮑﮭﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﻃﺒﺎﺀ ﮐﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﭘﮍﮬﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻋﻼﺝ ﺍﻻﻣﺮﺍﺽ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﮑﻞ ﺍﻣﺮ ﺗﺸﺨﯿﺺ ﮐﻮ ﻟﮑﮭﺎ ﮨﮯ ۔ ﭘﺲ ﺟﻮ ﺷﺨﺺ ﺗﺸﺨﯿﺺ ﻣﺮﺽ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ﻭﮦ ﻋﻼﺝ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺑﻌﺾ ﺍﻣﺮﺍﺽ ﺍﯾﺴﮯ ﺍَﺩَﻕ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺭﯾﮏ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮫ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﺎ۔ ﭘﺲ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﺍﻃﺒﺎﺀ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﯽ ﺩﻗﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﻟﮑﮭﺎ ہے ﮐﮧ ﺩﻋﺎﺅﮞ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﻟﮯ۔ ﻣﺮﯾﺾ ﺳﮯ ﺳﭽﯽ ﮨﻤﺪﺭﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﺍﺧﻼﺹ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﮔﺮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﭘﻮﺭﯼ ﺗﻮﺟﮧ ﺍﻭﺭ ﺩﺭﺩ ﺩﻝ ﺳﮯ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﮮ ﺗﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻣﺮﺽ ﮐﯽ ﺍﺻﻠﯿﺖ ﮐﮭﻮﻝ ﺩﮮ ﮔﺎ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻏﯿﺐ ﻣﺨﻔﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔
ﭘﺲ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮭﻮ ﮐﮧ ﺧﺪﺍ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﺍﻟﮓ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺻﺮﻑ ﺍﭘﻨﮯ ﻋﻠﻢ ﺍﻭﺭ ﺗﺠﺮﺑﮧ ﮐﯽ ﺑﻨﺎ ﭘﺮ ﺟﺘﻨﺎ ﺑﮍﺍ ﺩﻋﻮﯼٰ کرﮮ ﮔﺎ ﺍﺗﻨﯽ ﮨﯽ ﺑﮍﯼ ﺷﮑﺴﺖ ﮐﮭﺎﺋﮯ ﮔﺎ ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﻮ ﺗﻮﺣﯿﺪ ﮐﺎ ﻓﺨﺮ ﮨﮯ ۔ ﺗﻮﺣﯿﺪ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﺻﺮﻑ زﺑﺎﻧﯽ ﺗﻮﺣﯿﺪ ﮐﺎ ﺍﻗﺮﺍﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﺻﻞ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻋﻤﻠﯽ ﺭﻧﮓ ﻣﯿﮟ ﺣﻘﯿﻘﺘﺎً ﺍﭘﻨﮯ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﺍﻣﺮ کا ﺛﺒﻮﺕ ﺩﮮ ﺩﻭ ﮐﮧ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺗﻢ ﻣﻮَﺣَّﺪ ﮨﻮ ﺍﻭﺭ ﺗﻮﺣﯿﺪ ﮨﯽ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺷﯿﻮﮦ ﮨﮯ۔ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﮨﮯ کہ ﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﺍﻣﺮ ﺧﺪﺍ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮨﻮﺗﺎﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﻟﺤَﻤﺪُﻟﻠّٰﮧ ﺍﻭﺭ ﻏﻤﯽ اور ﻣﺎﺗﻢ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍِﻧَّﺎ ﻟِﻠّٰﮧ ﮐﮩﮧ ﮐﺮ ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﺍﻗﻊ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﮨﺮ ﮐﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻣﺮﺟﻊ ﺻﺮﻑ ﺧﺪﺍ ﮨﯽ ہے، ﺟﻮ ﻟﻮﮒ ﺧﺪﺍ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺳﮯ ﺍﻟﮓ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﻆ ﺍﭨﮭﺎﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻭﮦ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮭﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻥ
ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﺗﻠﺦ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﺗﺴﻠﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻃﻤﯿﻨﺎﻥ ﺑﺠﺰ ﺧﺪﺍ ﻣﯿﮟ ﻣﺤﻮ ﮨﻮﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﺍ ﮐﻮ ہی ﮨﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﺎ ﻣﺮﺟﻊ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺗﻮ ﺑﮩﺎﺋﻢ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺗﺴﻠﯽ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﮯ۔ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﺭﺍﺣﺖ ﺍﻭﺭ ﺗﺴﻠﯽ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﯼ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺧﺪﺍ ﺳﮯ ﺍﻟﮓ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﮯ ﺍﻭﺭ ﺧﺪﺍ تعاﻟﯽٰ ﺳﮯ ﮨﺮ ﻭﻗﺖ ﺩﻝ ﮨﯽ ﺩل ﻣﯿﮟ ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ‘‘ ۔
( ﻣﻠﻔﻮﻇﺎﺕ ﺟﻠﺪ ﭘﻨﺠﻢ ﻃﺒﻊ ﺟﺪﯾﺪ۔
ﺻﻔﺤﮧ ۶۱۲،۶۱۳ ‏)
ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ :
’’ ﻃﺒﯿﺐ ﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﯿﻤﺎﺭﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﺩﻋﺎ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﮮ۔ ﺳﺐ ﺫﺭﮦ ﺫﺭﮦ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﮨﮯ۔ ﺧﺪﺍﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺣﺮﺍﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮐﮧ ﺗﻢ ﺣﯿﻠﮧ ﮐﺮﻭ۔ ﺍﺱ ﻭﺍﺳﻄﮯ ﻋﻼﺝ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ
ﺿﺮﻭﺭﯼ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﺪﺍﺑﯿﺮ ﮐﺮﻧﺎ ﺿﺮﻭﺭﯼ ﺍﻣﺮ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﺎﺩ ﺭﮐﮭﻮ ﮐﮧ ﻣﻮٔﺛﺮِ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﺧﺪﺍﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮨﯽ ﮨﮯ ۔ ﺍﺳﯽ ﮐﮯ ﻓﻀﻞ ﺳﮯ ﺳﺐ ﮐﭽﮫ ہو ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﭼﺎﮨﺌﮯ ﮐﮧ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺩﻭﺍ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﺩﻋﺎ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﮮ۔ ﺑﻌﺾ ﻭﻗﺖ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺣﺎﻝ ﺩﻭﺍﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺑﺬﺭﯾﻌﮧ ﺍﻟﮩﺎﻡ ﯾﺎ ﺧﻮﺍﺏ ﺑﺘﻼ ﺩﯾﺘﺎﮨﮯ ﺍﻭﺭ اس ﻃﺮﺡ ﺩﻋﺎ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻃﺒﯿﺐ ﻋﻠﻢ ﻃﺐ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﺍ ﺍﺣﺴﺎﻥ ﮐﺮﺗﺎﮨﮯ، ﮐﺌﯽ ﺩﻓﻌﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮨﻢ ﮐﻮ ﺑﻌﺾ ﺑﯿﻤﺎﺭﯾﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ بذریعہ ﺍﻟﮩﺎﻡ ﮐﮯ ﻋﻼﺝ ﺑﺘﺎﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ۔ ﯾﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻓﻀﻞ ﮨﮯ ‘‘ ۔
‏( ﻣﻠﻔﻮﻇﺎﺕ ﺟﻠﺪ ۵، ﻃﺒﻊ ﺟﺪﯾﺪ
ﺻﻔﺤﮧ ۵۳،۵۴ ‏)
ﻓﺮﻣﺎﯾﺎﮐﮧ :
’’ ﺑﯿﻤﺎﺭﯾﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ ﻗﻀﺎ ﻣﺒﺮﻡ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﻭﮨﺎﮞ ﺗﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﯽ ﭘﯿﺶ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﯾﺴﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻭﮨﺎﮞ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﺑﮩﺖ ﺳﯽ ﺩﻋﺎﺅﮞ ﺍﻭﺭ ﺗﻮﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺟﻮﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺩﮮ ﺩﯾﺘﺎﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻌﺾ ﺍﻭﻗﺎﺕ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﺎﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺸﺎﺑﮧ ﻣﺒﺮﻡ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭨﻼ ﺩﯾﻨﮯ ﭘﺮ ﺑﮭﯽ ﺧﺪﺍﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﻗﺎﺩﺭ ﮨﮯ ۔ ﯾﮧ ﺣﺎﻟﺖ
ﺍﯾﺴﯽ ﺧﻄﺮﻧﺎﮎ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺗﺤﻘﯿﻘﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺑﮭﯽ ﻻﻋﻼﺝ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺧﺪﺍ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﮯ ﻓﻀﻞ ﮐﯽ ﯾﮧ
ﻋﻼﻣﺖ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺑﮩﺘﺮ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺟﺎﻭﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﺣﺎﻟﺖ ﺩﻥ ﺑﺪﻥ ﺍﭼﮭﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﺟﺎﻭﮮ ﻭﺭﻧﮧ ﺑﺼﻮﺭﺕ ﺩﯾﮕﺮ ﺣﺎﻟﺖ ﻣﺮﯾﺾ ﮐﯽ ﺩﻥ ﺑﺪﻥ ﺭﺩﯼ ﮨﻮ ﺗﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﮨﯽ ﮐﭽﮫ ﺍﯾﺴﮯ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﻧﮯ ﻟﮕﺘﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﮧ ﻣﺮﺽ ﺑﮍﮬﺘﺎ ﮔﯿﺎ ﺟﻮﮞ ﺟﻮﮞ ﺩﻭﺍ ﮐﯽ ﺍﮐﺜﺮ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﺮﯾﺾ ﺟﻦ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺑﮭﯽ ﻓﺘﻮﯼٰ ﺩﮮ ﭼﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﺳﺎﻣﺎﻥ ﻇﺎﮨﺮﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺍٓﺗﮯ ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻭﺍﺳﻄﮯ دعا ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺗﻮﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﺍﻥ ﮐﻮ ﻣﻌﺠﺰﺍﻧﮧ ﺭﻧﮓ ﻣﯿﮟ ﺷﻔﺎ ﺍﻭﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻋﻄﺎ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﮔﻮﯾﺎ ﮐﮧ ﻣﺮﺩﮦ ﺯﻧﺪﮦ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺑﺎﺕ
ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ‘‘ ۔
( ﻣﻠﻔﻮﻇﺎﺕ ﺟﻠﺪ ۵ ﻃﺒﻊ ﺟﺪﯾﺪ ﺹ
۵۳۷ ‏)

اپنا تبصرہ بھیجیں