جامن کے طبی فوائد Medicinal benefits of Java plum

🍇 جامن کے طبی فوائد 🍇

جامن ایک سستا اور آسانی سے حاصل ہونے والا پھل ہے۔ اس پھل کی آمد موسم برسات میں ہوتی ہے۔ اسی موسم میں اسکا اختتام بھی ہو جاتا ہے۔ یہ پھل شمالی پاکستان سے لے کر جنوبی ہند تک عام پایا جاتا ہے۔

اطباء کے نزدیک جامن کا مزاج دوسرے درجے میں سرد و خشک ہے۔ اللہ تعالٰی نے حضرت انسان کے لئے پھل سبزیوں کی صورت میں جو نعمتیں عطا فرمائی ہیں انکی ایک بڑی خوبی یہ ہے کہ یہ اپنے موسمی تقاضوں کے آئینہ دار ہوتے ہیں۔

جامن کی بطور پھل غذا بخشی اپنی جگہ مگر یہ متعدد عوارضات میں تدبیر کا بھی کام دیتا ہے اسطرح جامن کو ان پھلوں میں شمار کر سکتے ہیں جو غذائی و دوائی فوائد سے مالا مال ہیں-


جامن کی اقسام:
جامن چھوٹا بھی ہوتا ہے جسے دیسی جامن کہتے ہیں اور بڑا بھی جو پھلندا کہلاتا ہے جب کہ ایک تیسری قسم بھی ہوتی ہے جس کا گودا بہت کم ہوتا ہے۔

جامن کے قیمتی طبی فوائد:
جامن کے بے شمار طبی فوائد ہیں اور یہ کئی امراض کے علاج میں فائدہ ثابت ہوا ہے۔ جامن ذیابیطس کنٹرول کرنے میں انتہائی مفید ہے۔ذیابیطس ٹائپ 1 کی بجائے ذیابیطس ٹائپ 2 میں جامن کا استعمال زیادہ فائدہ مند ثابت ہوتا ہے۔ لیکن اس مرض کی دیگر مروجہ ادویات کے بجائے صرف جامن ہی کے استعمال پر انحصار کسی طور مناسب نہیں۔

شوگر کے مریض اگر کبھی کبھار آم کھالیں تو اس کے بعد جامن کھانے سے شوگر لیول اعتدال پر رکھا جاسکتا ہے۔
نیز اس سے آم کی حدت بھی معتدل ہو جاتی ہے-

موسم برسات میں اسہال،گیسٹرو اور دیگر پیٹ کے امراض کے لئے بھی جامن کا سرکہ فائدہ مند ہے۔ جو صدیوں سے مستعمل ہے۔ لو لگنے کی صورت میں جامن کھانے سے لو
کے اثرات کا خاتمہ ہو جاتا ہے۔

پھوڑے پھنسیوں سے محفوظ رہنے کیلئے جامن نہایت مفید ہے۔ چہرے کے داغ دھبے’ چھائیاں’ جامن یا جامن کے شربت کے مسلسل استعمال کرنے سے دور ہو جاتی ہیں۔ چہرے کی رنگت نکھر جاتی ہے۔

چہرے کی شادابی’ داغ’ دھبے’ چھائیاں دور کرنے کیلئے جامن کا بیرونی استعمال بھی کیا جاتا ہے اس مقصد کیلئے جامن کی گٹھلیوں کو پانی میں رگڑ کر اسکا پیسٹ بنائیں چہرے پر اسکا لیپ کریں۔جامن جسم کو تقویت دیتا ہے۔

جامن پیشاب کی جلن میں بھی مفید ہے۔ اگر منہ پک جائے تو جامن کے نرم پتے 1 پاؤ لے کر ایک کلو پانی میں جوش دیں بعد ازاں چھان کر کلیاں کرنے سے فائدہ ہوجاتا ہے۔


جامن کا کھانا آواز کو درست اور گلے کو صاف کرتا ہے۔
رات کو سوتے وقت منہ سے پانی بہنے کی شکایت (بادی)
کو دور کرتا ہے۔جامن تیزابیتِ معدہ کا خاتمہ کرتا ہے۔ معدہ اور آنتوں کی کمزوری کو دور کرنے کیلئے ایک پاؤ جامن کے سرکے میں تین پاؤ چینی ملا کر سکنجبین بنائیں اور صبح
و شام استعمال کریں۔

بواسیر کا خون بند کرنے کے لئے بیس گرام جامن کے پتے
ایک پاؤ دودھ میں رگڑ کر چھان کر پلانا مفید ہے۔

جامن کو رطوباتی قے اور جی متلانے کے عوارضات میں مفید پایا گیا ہے۔ اور ایسے دست جو موسم برسات میں رطوبا کیوجہ سے ہو جاتے ہیں۔انکے لئے جامن کا استعمال ایک مفید غذائی دوائی تدبیر کا درجہ رکھتا ہے-

جامن کے استعمال سے خون کا گاڑھاپن اور بڑھتی ہوئی موسم تیزابیت ختم ہو جاتی ہے-اسی سبب یہ خون کے کینسر میں بھی فائدہ مند قرار دیا گیا ہے۔اپنے سرد خشک مزاج کے سبب جسم کی فالتو رطوبات کو جذب کرتا ہے۔
جگر اور تلی کے ورم میں اچھے اثرات ظاہر کرتا ہے-

جامن میں فولاد کی موجودگی کی وجہ سے خون کے سرخ ذرات کی تعداد بڑھ جاتی ہے ۔

جامن کے کیمیائی تجزیہ کے مطابق اس میں فولاد بھی
پایا جاتا ہے اس طرح خون کی کمی والے حضرات کے لئے بھی مفید ہے۔جامن وٹامن (حیاتین ج) کا قدرتی خزانہ ہے اس لئے جن لوگوں کو وٹامن سی کے کمی کے نتیجہ میں مسوڑھوں سے خون آتا ہے جامن کے استعمال کے ساتھ ساتھ اسکے پتوں سے بھی استفادہ کریں کیوں کہ جامن کے پتے اور درخت بھی کام آتے ہیں مسوڑھوں سے خون آنے کی صورت میں جامن کے پتوں کو پانی میں جوش دے کر تھوڑا سا نمک ملا کر غر غرے کرنا مفید ہے-

جامن کا سرکہ مندرجہ ذیل طریقے سے بنایا جا سکتا ہے:
جامن کا رس حسب ضرورت نکال کر مٹی کے گھڑے میں ڈال کر اچھی طرح بند کر کے دھوپ میں رکھ دیں-اس میں تھوڑی سی پسی ہوئی رائی بھی ڈال دیں۔دو ماہ بعد گھڑے میں جو کچھ ہو چھان لیں جامن کا سرکہ تیار ہے-یہ سرکہ جامن معدہ اور آنتوں کو طاقت دیتا ہے اس سے نہ صرف نظام ہضم صحیح رہتا ہے بلکہ غذا بھی جلد ہضم ہوتی ہے۔ بھوک صحیح لگتی ہے۔


اپنے افعال وخواص کے لحاظ سے یہ بھوک لگاتا ہے۔گرمی دور کرتا ہے، خون کا جوش اور تیزابیت دور کرتا ہے۔گرم مزاج والوں کیلئے ایک عمدہ تحفہ ہے۔

جامن کے چند طبی استعمالات:

مضبوط دانت اور مسوڑھے:
جامن کی لکڑی کا کوئلہ پیس کر قدرے نمک اور سیاہ
مرچ ملا کر منجن کی طرح استعمال کرنے سے دانت اور مسوڑھے مضبوط ہوتے ہیں۔ اس طرح جامن کے درخت
کی چھال کے جوشاندے سے بھی یہی فوائد ملیں گے۔

منہ کے چھالے:
منہ کے چھالوں میں بغیر نمک جامن

نکسیر:
جامن کے پھول خشک کر کے خوب باریک پیس کر ہلاس
کی طرح استعمال کرنے سے نکسیر رک جاتی ہے۔

تلی کا ورم:
جامن کا سرکہ کھانے اور ورم پر لگانے سے ورم تلی میں فائدہ ہوتا ہے-

ﺟﺎﻣﻦ ﺍﯾﮏ ﺳﺴﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﭘﮭﻞ ﮨﮯ – ﺍﺱ ﭘﮭﻞ ﮐﯽ ﺁﻣﺪ ﻣﻮﺳﻢ ﺑﺮﺳﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﯽ ﻣﻮﺳﻢ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﺧﺘﺘﺎﻡ ﺑﮭﯽ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﭘﮭﻞ ﺷﻤﺎﻟﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺳﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺟﻨﻮﺑﯽ ﮨﻨﺪ ﺗﮏ ﻋﺎﻡ ﭘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﺍﻃﺒﺎﺀ ﮐﮯ ﻧﺰﺩﯾﮏ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﻣﺰﺍﺝ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺩﺭﺟﮯ ﻣﯿﮟ ﺳﺮﺩ ﻭ ﺧﺸﮏ ﮨﮯ۔ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟٰﯽ ﻧﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﭘﮭﻞ ﺳﺒﺰﯾﻮ ﮞ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﻧﻌﻤﺘﯿﮟ ﻋﻄﺎ ﻓﺮﻣﺎﺋﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﯼ ﺧﻮﺑﯽ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻮﺳﻤﯽ ﺗﻘﺎﺿﻮﮞ ﮐﮯ ﺁﺋﯿﻨﮧ ﺩﺍﺭ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﯽ ﺑﻄﻮﺭ ﭘﮭﻞ ﻏﺬﺍ ﺑﺨﺸﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﮕﮧ ﻣﮕﺮ ﯾﮧ ﻣﺘﻌﺪﺩ ﻋﻮﺍﺭﺿﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺗﺪﺑﯿﺮ ﮐﺎ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻡ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﻮ ﺍﻥ ﭘﮭﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﺎﺭ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮﻏﺬﺍﺋﯽ ﻭ ﺩﻭﺍﺋﯽ ﻓﻮﺍﺋﺪ ﺳﮯ ﻣﺎﻻ ﻣﺎﻝ ﮨﯿﮟ –
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﯽ ﺍﻗﺴﺎﻡ :
ﺟﺎﻣﻦ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺴﮯ ﺩﯾﺴﯽ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﮍﺍ ﺑﮭﯽ ﺟﻮ ﭘﮭﻠﻨﺪﺍ ﮐﮩﻼﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺒﮑﮧ ﺍﯾﮏ ﺗﯿﺴﺮﯼ ﻗﺴﻢ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﮔﻮﺩﺍ ﺑﮩﺖ ﮐﻢ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﻃﺒﯽ ﻓﻮﺍﺋﺪ :
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﻃﺒﯽ ﻓﻮﺍﺋﺪ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﮐﺌﯽ ﺍﻣﺮﺍﺽ ﮐﮯ ﻋﻼﺝ ﻣﯿﮟ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺍ ﮨﮯ۔ ﺟﺎﻣﻦ ﺫﯾﺎﺑﯿﻄﺲ ﮐﻨﭩﺮﻭﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﻣﻔﯿﺪ ﮨﮯ۔ ﺫﯾﺎﺑﯿﻄﺲ ﭨﺎﺋﭗ ﻭﻥ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺫﯾﺎﺑﯿﻄﺲ ﭨﺎﺋﭗ ﭨﻮ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﻣﻨﺪ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﻣﺮﺽ ﮐﯽ ﺩﯾﮕﺮ ﻣﺮﻭﺟﮧ ﺍﺩﻭﯾﺎﺕ ﮐﮯ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺻﺮﻑ ﺟﺎﻣﻦ ﮨﯽ ﮐﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﭘﺮ ﺍﻧﺤﺼﺎﺭ ﮐﺴﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻧﮩﯿﮟ۔
ﺷﻮﮔﺮ ﮐﮯ ﻣﺮﯾﺾ ﺍﮔﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﺒﮭﺎﺭ ﺁﻡ ﮐﮭﺎﻟﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺷﻮﮔﺮ ﻟﯿﻮﻝ ﺍﻋﺘﺪﺍﻝ ﭘﺮ ﺭﮐﮭﺎ ﺟﺎﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﻧﯿﺰ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺁﻡ ﮐﯽ ﺣﺪﺕ ﺑﮭﯽ ﻣﻌﺘﺪﻝ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ –
ﻣﻮﺳﻢ ﺑﺮﺳﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮩﺎﻝ ’ ﮔﯿﺴﭩﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﭘﯿﭧ ﮐﮯ ﺍﻣﺮﺍﺽ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﺳﺮﮐﮧ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﻣﻨﺪ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺻﺪﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﺴﺘﻌﻤﻞ ﮨﮯ۔ ﻟﻮ ﻟﮕﻨﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﻟﻮ ﮐﮯ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﮐﺎ ﺧﺎﺗﻤﮧ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﭘﮭﻮﮌﮮ ﭘﮭﻨﺴﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺟﺎﻣﻦ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﻣﻔﯿﺪ ﮨﮯ۔ ﭼﮩﺮﮮ ﮐﮯ ﺩﺍﻍ ﺩﮬﺒﮯ ’ ﭼﮭﺎﺋﯿﺎﮞ ’ ﺟﺎﻣﻦ ﯾﺎ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﺷﺮﺑﺖ ﮐﮯ ﻣﺴﻠﺴﻞ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭼﮩﺮﮮ ﮐﯽ ﺭﻧﮕﺖ ﻧﮑﮭﺮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔
ﭼﮩﺮﮮ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﺍﺑﯽ ’ ﺩﺍﻍ ’ ﺩﮬﺒﮯ ’ ﭼﮭﺎﺋﯿﺎﮞ ﺩﻭﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﺑﯿﺮﻭﻧﯽ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﺑﮭﯽ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻣﻘﺼﺪ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﯽ ﮔﭩﮭﻠﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺭﮔﮍ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﭘﯿﺴﭧ ﺑﻨﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻟﯿﭗ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﺟﺎﻣﻦ ﺟﺴﻢ ﮐﻮ ﺗﻘﻮﯾﺖ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔
ﺟﺎﻣﻦ ﭘﯿﺸﺎﺏ ﮐﯽ ﺟﻠﻦ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﻔﯿﺪ ﮨﮯ۔ ﺍﮔﺮ ﻣﻨﮧ ﭘﮏ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﻧﺮﻡ ﭘﺘﮯ ﺍﯾﮏ ﭘﺎﺅ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﮐﻠﻮ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺵ ﺩﯾﮟ ﺑﻌﺪ ﺍﺯﺍﮞ ﭼﮭﺎﻥ ﮐﺮ ﮐﻠﯿﺎﮞ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﺁﻭﺍﺯ ﮐﻮ ﺩﺭﺳﺖ ﺍﻭﺭ ﮔﻠﮯ ﮐﻮ ﺻﺎﻑ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺳﻮﺗﮯ ﻭﻗﺖ ﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﺑﮩﻨﮯ ﮐﯽ ﺷﮑﺎﯾﺖ ‏( ﺑﺎﺩﯼ ﮐﯿﻔﯿﺖ ‏) ﮐﻮ ﺩﻭﺭ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﺎﻣﻦ ﺗﯿﺰﺍﺑﯿﺖِ ﻣﻌﺪﮦ ﮐﺎ ﺧﺎﺗﻤﮧ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﻌﺪﮦ ﺍﻭﺭ ﺁﻧﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﮐﻤﺰﻭﺭﯼ ﮐﻮ ﺩﻭﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﭘﺎﺅ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﺳﺮﮐﮯ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﻦ ﭘﺎﺅ ﭼﯿﻨﯽ ﻣﻼ ﮐﺮ ﺳﮑﻨﺠﺒﯿﻦ ﺑﻨﺎﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺻﺒﺢ ﻭﺷﺎﻡ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﯾﮟ۔
ﺑﻮﺍﺳﯿﺮ ﮐﺎ ﺧﻮﻥ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺑﯿﺲ ﮔﺮﺍﻡ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﭘﺘﮯ ﺍﯾﮏ ﭘﺎﺅ ﺩﻭﺩﮪ ﻣﯿﮟ ﺭﮔﮍ ﮐﺮ ﭼﮭﺎﻥ ﮐﺮ ﭘﻼﻧﺎ ﻣﻔﯿﺪ ﮨﮯ۔
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﻮ ﺭﻃﻮﺑﺎﺗﯽ ﻗﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﯽ ﻣﺘﻼﻧﮯ ﮐﮯ ﻋﻮﺍﺭﺿﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﻣﻔﯿﺪ ﭘﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺴﮯ ﺩﺳﺖ ﺟﻮ ﻣﻮﺳﻢ ﺑﺮﺳﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺭﻃﻮﺑﺎ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮨﻮﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﺍﯾﮏ ﻣﻔﯿﺪ ﻏﺬﺍﺋﯽ ﺩﻭﺍﺋﯽ ﺗﺪﺑﯿﺮ ﮐﺎ ﺩﺭﺟﮧ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ –
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﮐﺎ ﮔﺎﮌﮬﺎﭘﻦ ﺍﻭﺭ ﺑﮍﮬﺘﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻣﻮﺳﻢ ﺗﯿﺰﺍﺑﯿﺖ ﺧﺘﻢ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ – ﺍﺳﯽ ﺳﺒﺐ ﯾﮧ ﺧﻮﻥ ﮐﮯ ﺳﺮﻃﺎﻥ ‏( ﮐﯿﻨﺴﺮ ‏) ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﻣﻨﺪ ﻗﺮﺍﺭ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺮدﻭﺧﺸﮏ ﻣﺰﺍﺝ ﮐﮯ ﺳﺒﺐ ﺟﺴﻢ ﮐﯽ فالتو ﺭﻃﻮﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﺟﺬﺏ ﮐﺮ ﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﮕﺮ ﺍﻭﺭ ﺗﻠﯽ ﮐﮯ ﻭﺭﻡ ﻣﯿﮟ ﺍﭼﮭﮯ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﻇﺎﮨﺮ ﮐﺮ ﺗﺎ ﮨﮯ –
ﺟﺎﻣﻦ ﻣﯿﮟ ﻓﻮﻻﺩ ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﮐﮯ ﺳﺮﺥ ﺫﺭﺍﺕ ﮐﯽ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺑﮍﮪ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ۔
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﮐﯿﻤﯿﺎﺋﯽ ﺗﺠﺰﯾﮧ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﻓﻮﻻﺩ ﺑﮭﯽ ﭘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺧﻮﻥ ﮐﯽ ﮐﻤﯽ ﻭﺍﻟﮯ ﺣﻀﺮﺍﺕ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﻔﯿﺪ ﮨﮯ ۔ ﺟﺎﻣﻦ ﻭﭨﺎﻣﻦ ‏( ﺣﯿﺎﺗﯿﻦ ﺝ ‏) ﮐﺎ ﻗﺪﺭﺗﯽ ﺧﺰﺍﻧﮧ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﺟﻦ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﻭﭨﺎﻣﻦ ﺳﯽ ﮐﮯ ﮐﻤﯽ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻮﮌﮬﻮﮞ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺘﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﺘﻔﺎﺩﮦ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮧ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﭘﺘﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﺭﺧﺖ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻡ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﺴﻮﮌﮬﻮﮞ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﺁﻧﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﭘﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺵ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺗﮭﻮﮌﺍ ﺳﺎ ﻧﻤﮏ ﻣﻼ ﮐﺮ ﻏﺮ ﻏﺮﮮ ﮐﺮﻧﺎ ﻣﻔﯿﺪ ﮨﮯ –
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﺳﺮﮐﮧ ﻣﻨﺪﺭﺟﮧ ﺫﯾﻞ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ :
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﺭﺱ ﺣﺴﺐ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻧﮑﺎﻝ ﮐﺮ ﻣﭩﯽ ﮐﮯ ﮔﮭﮍﮮ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﺍﭼﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﻨﺪ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺩﮬﻮﭖ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﮟ – ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺳﯽ ﭘﺴﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺭﺍﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﮟ ﺩﻭ ﻣﺎﮦ ﺑﻌﺪ ﮔﮭﮍﮮ ﻣﯿﮟ ﺟﻮ ﮐﭽﮫ ﮨﻮ ﭼﮭﺎﻥ ﻟﯿﮟ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﺳﺮﮐﮧ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﮯ –
اسی طرح اگر اس میں 2۔3 چمچ سرکہ ملا دیا جائے تو 21 دن تک سرکہ جامن تیار ہو جاتا ہے
ﯾﮧ ﺳﺮﮐﮧ ﺟﺎﻣﻦ ﻣﻌﺪﮦ ﺍﻭﺭ ﺁﻧﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﻃﺎﻗﺖ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﻧﻈﺎﻡ ﮨﻀﻢ ﺻﺤﯿﺢ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﻏﺬﺍ ﺑﮭﯽ ﺟﻠﺪ ﮨﻀﻢ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ۔ ﺑﮭﻮﮎ ﺻﺤﯿﺢ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﮯ ۔شوگر کے لیے بہترین چیز ہے
ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻓﻌﺎﻝ ﻭﺧﻮﺍﺹ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺑﮭﻮﮎ ﻟﮕﺎﺗﺎﮨﮯ ، ﮔﺮﻣﯽ ﺩﻭﺭ ﮐﺮﺗﺎﮨﮯ ، ﺧﻮﻥ ﮐﺎ ﺟﻮﺵ ﺍﻭﺭ ﺗﯿﺰﺍﺑﯿﺖ ﺩﻭﺭ ﮐﺮﺗﺎﮨﮯ۔ ﮔﺮﻡ ﻣﺰﺍﺝ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﻋﻤﺪﮦ ﺗﺤﻔﮧ ﮨﮯ۔
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﭼﻨﺪ ﻃﺒﯽ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻻﺕ :
ﻣﻀﺒﻮﻁ ﺩﺍﻧﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻮﮌﮬﮯ :
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﯽ ﻟﮑﮍﯼ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﻠﮧ ﭘﯿﺲ ﮐﺮ ﻗﺪﺭﮮ ﻧﻤﮏ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﮦ ﻣﺮﭺ ﻣﻼ ﮐﺮ ﻣﻨﺠﻦ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﺩﺍﻧﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﻮﮌﮬﮯ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﺩﺭﺧﺖ ﮐﯽ ﭼﮭﺎﻝ ﮐﮯ ﺟﻮﺷﺎﻧﺪﮮ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﯾﮩﯽ ﻓﻮﺍﺋﺪ ﻣﻠﯿﮟ ﮔﮯ۔
ﻣﻨﮧ ﮐﮯ ﭼﮭﺎﻟﮯ :
ﻣﻨﮧ ﮐﮯ ﭼﮭﺎﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﻐﯿﺮ ﻧﻤﮏ ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﻣﻔﯿﺪ ﮨﮯ۔
ﺩﻣﮧ ﺍﻭﺭ ﮐﮭﺎﻧﺴﯽ :
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﺩﺭﺧﺖ ﮐﺎ ﭼﮭﻠﮑﺎ ﺩﻭ ﺗﻮﻟﮧ ﺁﺩﮬﮯ ﮐﻠﻮ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺵ ﺩﯾﮟ۔ ﺟﺐ ﺍﯾﮏ ﭘﺎﺅ ﭘﺎﻧﯽ ﺑﺎﻗﯽ ﺭﮦ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭼﺎﺭ ﺭﺗﯽ ﻧﻤﮏ ﻣﻼ ﮐﺮ ﺻﺒﺢ ﻭﺷﺎﻡ ﭘﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﻣﺮﺽ ﺩﻣﮧ ﺍﻭﺭ ﮐﮭﺎﻧﺴﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﻔﯿﺪ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﺯﺧﻢ :
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﭼﮭﻠﮑﺎ ، ﭘﺎﻧﭻ ﺗﻮﻟﮧ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﮐﻠﻮ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﺟﻮﺵ ﺩﯾﮟ ۔ ﺟﺐ ﺍﯾﮏ ﭘﺎﺅ ﭘﺎﻧﯽ ﺭﮦ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﭼﮭﺎﻥ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻧﯿﻢ ﮔﺮﻡ ﭘﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﺯﺧﻤﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﮬﻮﺋﯿﮟ ﺯﺧﻢ ﺻﺤﯿﺢ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮞﮕﮯ۔
ﻧﮑﺴﯿﺮ :
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮯ ﭘﮭﻮﻝ ﺧﺸﮏ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺧﻮﺏ ﺑﺎﺭﯾﮏ ﭘﯿﺲ ﮐﺮ ﮨﻼﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﻧﮑﺴﯿﺮ ﺭﮎ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔
ﺗﻠﯽ ﮐﺎ ﻭﺭﻡ :
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﺎ ﺳﺮﮐﮧ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﺭﻡ ﭘﺮ ﻟﮕﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﻭﺭﻡ ﺗﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﻓﺎﺋﺪﮦ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ –
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺻﺤﯿﺢ ﻃﺮﯾﻘﮧ :
ﺟﺎﻣﻦ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﺻﺤﯿﺢ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻧﻤﮏ ﺍﻭﺭ ﺳﯿﺎﮦ ﻣﺮﭺ ﭘﯿﺲ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﮭﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ –
ﺍﺣﺘﯿﺎﻃﯽ ﺗﺪﺍﺑﯿﺮ :
ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﮨﺮ ﺷﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻋﺘﺪﺍﻝ ﮨﯽ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺭﺍﮦ ﻋﻤﻞ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺟﺎﻣﻦ ﺑﮭﯽ ﺣﺪ ﺍﻋﺘﺪﺍﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﯾﮟ۔
ﺍﺱ ﮐﺎ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﻗﺒﺾ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﺧﺎﻟﯽ ﭘﯿﭧ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺩﺭﺩ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔

جامن کھانے کا صحیح طریقہ:
جامن کھانے کا صحیح طریقہ یہ ہے کہ نمک اور سیاہ
مرچ پیس کر کے اس کے ساتھ کھایا جائے-

احتیاطی تدابیر:
جس طرح ہر شے میں اعتدال ہی مناسب راہ عمل ہے
اس طرح جامن بھی حد اعتدال میں استعمال کریں۔
اس کا زیادہ استعمال قبض کرتا ہے۔
ہمیشہ کھانے کے بعد کھائیں خالی پیٹ کھانے سے درد
پیدا کر دیتا ہے۔

جامن کے 30 حیرت انگیز فوائد:

-1 جامن معدہ، آنتوں کی جلن،خراش اور کمزوری دور کرنے والی بے مثل غذا ہے۔

-2 جامن اسٹارچ کو انرجی میں تبدیل کرکے بلڈ شوگر کی سطح کو نارمل رکھنے میں مدد کرتا ہے۔شوگر کے مریضوں کو روزانہ جامن کھانا چاہئے۔

-3 بھوک بڑھاتا ہے اور صفراء کا زور توڑتا کر معدہ کو طاقت دیتا ہے اور کھانے کو ہضم کرتا ہے۔

-4 جامن میں پیاس کی شدت اور خون کی گرمی کم کرنے کی قدرتی تاثیر ہے ۔

-5 ذیابیطس کے مریضوں کے لئے جامن کا استعمال انتہائی مفید ہے یہ خون میں شکر کی مقدار کو بڑھنے نہیں دیتا۔

-6 بڑھی ہوئی تلی کو کم کرنے اور جگر کی صحت کیلئے بہت فائدہ مند ہے نیا خون پیدا کرتا ہے۔

-7 گرمی سے نجات کا بہترین ذریعہ ہے لیکن جامن کھانے کے بعد پانی نہ پئیں۔

-8 پیشاب کی زیادتی کو کم کرتا ہے مثانہ کی کمزوری دور کرتا ہے۔

-9 دانتوں کی صحت کیلئے بھی مفید پھل ہے۔

-10 جامن کی گھٹلیاں سکھا کر پیس کر رکھ لیں اور روزانہ تیس ماشہ ادہ پانی سے کھالیں ذیابیطس کا خاتمہ ہو جائے گا۔

-11 کمر اور پیروں کے درد سے نجات کے لئے جامن گھٹلی سمیت پیسٹ بنا کر کھائیں ۔

-12 گرتے ہوئے بالوں کو روکتا ہے۔

-13 بڑھی ہوئی تلی کیلئے خالی جامن، جامن کا سرکہ یا جامن کا شربت بنا کر پینا بہت مفید ہے۔

-14 جامن کی چھال کا جو شاندہ اسہال اور پیچش میں فائدہ دیتا ہے۔

-15 جامن کی چھال کو پانی میں پکا کر غرارے اور کلیاں کرنے سے پھولے ہوئے مسوڑھوں اور گلے آنے کا مسئلہ حل ہو جاتا ہے۔

-16 جن کا معدہ کمزور ہو ان کے لئے جامن اور جامن کا سرکہ بہترین دوا کا کام کرتے ہیں ۔

-17 آنکھوں سے پانی نکلتا ہو یا موتیا آر ہا ہوتو جامن کی گھٹلی سکھا کر باریک پیس لیں اور صبح و شام تین تین ماشہ سادہ پانی کے ساتھ لیں۔

-18 جن لوگوں کو رات میں برے خواب آتے ہوں ان کو جامن کی گھٹلی کا پائوڈر صبح وشام کھانا چاہئے۔

-19 بیٹے ہوئے گلے اور آواز کیلئے جامن کی گھٹلیوں کو پیس کر چھوٹی چھوٹی گولیاں بنا کر رکھ لیں اور شہد لگا کر چوس لیں۔

-20 کیسے بھی دستوں میں جامن کے درخت کے ڈھائی پتے جو نہ زیادہ سخت ہوں نہ زیادہ نرم پیس کر تھوڑا سا نمک ملا کر اسکی گولیاں بنا لیں اور ایک گولی صبح و شام لینے سے دست فوراً رک جائیں گے۔

-21جامن کے پتے السر میں مفید ہیں ۔

-22جامن کا جوس مدافعتی نظام کو فروغ دیتا ہے۔

-23اینیمیا کے شکار افراد جامن ضرور کھائیں ۔

-24سوگرام جامن میں55 ملی گرام پوٹاشیم ہوتا ہے جو دل کے مریضوں کے لئے ا چھا ہے۔

-25جامن کے روزانہ استعمال سے ہائی بلڈ پریشر اور اسٹروک کے خطرے سے بچا جا سکتا ہے۔

-26جامن میں موجود وٹامن سی جلد کے لئے بہترین ہے۔

-27ایکنی کے لئے روزانہ رات کو جامن کی گھٹلی پیس کر دودھ میں ملا کر لگانے سے ایکنی ختم ہو جاتی ہے۔

-28داغ دھبوں سے نجات کے لئے جامن کی گھٹلی کا پائوڈر، لیموں کا رس، بیسن، بادام کا تیل اور عرق گلاب چند قطرے ملا کر چہرے پر لگائیں جب سوکھ جائے تو دھولیں۔

-29آئلی اسکن کیلئے جامن کا پلپ،جو کاآٹا،آملہ کا رس، اور عرق گلاب ملا کر فیس ماسک کے طور پر استعمال کریں جب سوکھ جائے تو دھولیں ۔

-30جامن کا مزاج خشک سرد ہے گرم مزج رکھنے والوں کے لئے مفید ہے۔

اپنا تبصرہ بھیجیں